صفحہ اول آئی پی ایس - ٹیم English
ٹیم


عرفان شہزاد چھاپیے ای میل

عرفان شہزادجناب عرفان شہزاد آئی پی ایس میں ریسرچ کو آرڈی نیٹرز کی ٹیم کے قائد ہیں۔ وہ آئی پی ایس کے جریدہ ''پالیسی پرسپیکٹیوز'' کے مدیر معاون ہیں۔ وہ خود ادارہ میں جن علمی میدانوں میں تحقیقی سرگرمیوں کو مربوط کرتے ہیں ان میں عالمگیریت، معیشت اور پاک چین تعلقات شامل ہیں۔ ادارہ سے گیارہ سال سے زائد عرصہ کی  وابستگی میں انہوں نے ادارہ کی سینئر قیادت کو تحقیقی سرگرمیوں کی منصوبہ بندی اور ارتباط میں مختلف حیثیتوں سے معاونت فراہم کی ہے۔ انہوں نے ادارہ کے لیے ۵۰ سے زائد سیمینار، ورک شاپ، گول میز مذاکرے اور کانفرنسیں منظم کی ہیں نیز آئی پی ایس کی متعدد مطبوعات، رپورٹس، دستاویزات کی تیاری کے مختلف مراحل میں حصہ لیا ہے یا معاونت کی ہے۔

 
پروفیسر سفیراختر چھاپیے ای میل

پروفیسر سفیر اخترپروفیسر ڈاکٹر سفیر اختر آئی پی ایس میں سینئر ریسرچ فیلو کی حیثیت سے وابستہ ہیں۔ آپ آئی پی ایس کے اردو جریدہ ''نقطہ نظر'' کے مدیر اور ''مغرب اور اسلام'' کے ادارتی بورڈ کے ممبر ہیں۔ یونیورسٹی آف یارک برطانیہ سے سیاسیات میں پی ایچ ڈی کی سند کے ساتھ ساتھ ایک معروف اسکالر اور تنقیدنگار ہیں۔ سماج، ادب، نظریات اور آبادیات جیسے موضوعات پر تقریباً ۲۰ کتب کے مصنف ہیں۔ آپ کے تنقیدی تجزیے اور تحقیقی مضامین پاکستان اور بھارت کے علمی جرائد میں شائع ہوتے رہتے ہیں۔ آپ نے قومی اور بین الاقوامی سطح کے بیسیوں سیمیناروں اور کانفرنسوں میں شرکت کی اور حصہ لیا۔

 
خالدرحمٰن چھاپیے ای میل

خالد رحمٰنخالد رحمٰن آئی پی ایس کے بانیوں میں سے ہیں اور ۱۹۸۲ء سے ڈائریکٹر جنرل کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔ معاشیات میں ایم اے ہیں۔ تحقیق، تربیت اور انتظام میں ان کے وسیع تجربے نے آئی پی ایس کو ایک فعال تھنک ٹینک کی حیثیت دینے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ ادارہ کے تحت وہ چار سو سے زائد سیمینار اور گول میز کانفرنسیں منعقد کروا چکے ہیں۔ 
آپ نے ادارہ میں تحقیقی اور تربیتی دونوں طرح کے پروگرامات منعقد کروانے میں اہم رول ادا کیا۔ علاوہ ازیں تحقیق اور تربیت کے متعدد دیگر اداروں میں بھی قائد تربیت کار کی حیثیت سے بلائے جاتے ہیں۔ آپ کی تحقیق کے محوری موضوعات میں قومی اور علاقائی سیاست، دینی مدارس اور چین کا مطالعہ شامل ہیں۔ آپ کی ۱۹ کتب (تصنیف وتالیف) شائع ہو چکی ہیں نیز بہت سے مقالات بھی مختلف فورمز پر پیش کرنے کے لیے تیار کیے۔ وہ آئی پی ایس کے علمی جریدہ پالیسی پرسپیکٹوز کے مدیر بھی ہیں۔ وہ بہت سى سماجى اور ترقياتی تنظيموں کی انتظامی/ مشاورتى مجالس كے ممبر اور ریڈیو، ٹی وی کے مختلف چینلز پر حالات حاضرہ پر اپنی ماہرانہ آراء پیش کرتے رہتے ہیں۔

 
پروفیسرخورشیداحمد چھاپیے ای میل

پروفیسر خورشید احمدپروفیسرخورشیداحمد  ایک معروف اسکالر، ماہر معاشیات اور دینی وعلمی حلقے کے متحرک رہنما ہیں۔ وہ انسٹی ٹیوٹ آف پالیسی اسٹڈیز اسلام آباد کے بانی چیئرمین ہیں۔ وہ اردو اور انگریزی میں ۷۰ سے زائد کتب تحریر/تدوین/ ترجمہ کر چکے ہیں۔ ان کی بہت سی کتابوں کا ترجمہ دیگر یورپی اور مشرقی زبانوں میں بھی ہو چکا ہے۔ اس کے علاوہ وہ متعدد مضامین، سیمینار پیپرز یا لیکچرز کی صورت میں بھی اپنا  قابل قدر علمی حصہ ادا کرتے رہتے ہیں۔ مذہب، سماج، تہذیب، تعلیم، معیشت اور آئینی معاملات وغیرہ کے حوالہ سے مشرق ومغرب کے فکر وفلسفہ پر ان کی گہری تقابلی نظر نیز مثبت انسانی اقدار سے ان کی قلبی وابستگی نے انہیں نہ صرف قومی بلکہ بین الاقوامی سطح پر کام کرنے والی سماجی ومعاشی اور کثیرالجہتی تنظیمات میں اہم مقام عطا کر دیا ہے۔ تعلیم، ادب اور معیشت کے میدان میں ان کی علمی خدمات کے اعتراف کے طور پر انہیں تین مرتبہ ڈاکٹریٹ کی اعزازی اسناد عطا کی جا چکی ہیں، اسناد دینے والے اداروں میں بالترتیب یونیورسٹی آف ملائیشیا، لغ برو یونیورسٹی برطانیہ اور انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی ملائیشیا شامل ہیں۔ وہ حکومت پاکستان میں وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی، ترقی اور شماریات کی حیثیت سے خدمات انجام دے چکے ہیں نیز ایک طویل عرصے سے پاکستان کی سینیٹ کے رکن ہیں۔
اسلامی معیشت کو علم کی دنیا میں ایک نیا مقام دینے کی کوششوں کے سلسلہ میں ان کے علمی کام کو وقعت ملی اور ۱۹۸۸ء میں انہیں پہلا اسلامی ترقیاتی بنک ایوارڈ برائے معیشت عطا کیا گیا۔ ۱۹۹۰ء میں ان کی اسلامی خدمات کے اعتراف کے طور پر شاہ فیصل انعام عطا کیا گیا۔ ۱۹۹۸ء میں امریکن فنانس ہاوس کی جانب سے انہیں اسلامی فنانس میں بیش قدر لاربا ایوارڈ سے نوازا  گیا۔ وہ پہلے اور واحد مسلم اسکالر ہیں جنہیں تین انتہائ قابل قدر بین الاقوامی اسلامی اعزازات عطا کیے گئے۔

 
«شروعپیچھے12آگےآخر»

صفحہ: 2